44

چھوٹے دکانداروں کے بلوں پر اضافی ٹیکس معاف

چھوٹے دکانداروں کے بلوں پر اضافی ٹیکس معاف
اسلام آباد (اے پی پی) وفاقی وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے بجلی کے بلوں میں چھوٹے دکانداروں کیلئے ریلیف دینے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ 150 یونٹ استعمال کرنےوالے دکانداروں کے بجلی کے بل پر اضافی ٹیکس معاف کر دینگے، ملک کو اس حال میں پہنچانے کے ذمہ دار عمران خان ہیں، انہوں نے کم قیمت پر پٹرول اور گیس بیچ کر سری لنکا جیسی حرکت کی، ہماری پہلی ترجیح معیشت کو بچانا ہے، جلد روپے پر دبائو کم اور چیزیں آسان ہونگی، گورنر اسٹیٹ بینک کی تعیناتی آئندہ ہفتے ہو جائیگی، آئی ایم ایف کی پیشگی شرائط میں سے ایک شرط رہتی ہے اور وہ شرط بھی آج (سوموار)کے روز پوری ہوجائیگی، حکومت نے مشکل فیصلے کرکے ملک کو ڈیفالٹ سے بچایا ہے،تحریک انصاف کی حکومت نے معیشت کےشعبے میں کوئی اصلاحات نہیں کیں، درآمدات میں کمی کے باعث روپے کی قدر مستحکم ہورہی ہے، ملکی برآمدات بڑھانے کیلئے بھرپور اقدامات کررہے ہیں، عمران خان کی حکومت نے ملکی تاریخ کا سب سے زیادہ قرضہ لیا، کوشش کررہے ہیں کہ کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ ایک سال میں سرپلس کردیں، الیکشن کمیشن فارن فنڈنگ کیس کا فیصلہ جلد کرے، 10فیصد ایکسپورٹ نہ کر نیوالی مینوفیکچرننگ کمپنیوں پراگلے سال 5 فیصد ایڈیشنل ٹیکس عائد ہو گا،مہنگائی بڑھ گئی لیکن میرے ہاتھ بندھے ہوئے ہیں، مشکلات سب کو برداشت کرنا پڑیں گی۔ اتوار کو یہاں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر وزیراعظم کے کوآرڈی نیٹر برائے معیشت و توانائی بلال اظہر کیانی بھی موجود تھے۔ وفاقی وزیر خزانہ نے کہاکہ رواں مہینے 5ارب ڈالر کی درآمدات کی گئیں، جون میں 3.8 بلین کی پیٹرولیم مصنوعات خریدیں، درآمدات میں کمی آئی ہے جو کہ خوش آئند ہے، درآمدات میں کمی کے باعث روپےکی قدر مستحکم ہورہی ہے، امپورٹڈ گاڑیوں کی درآمد پر پابندی ہے۔ کوشش کررہے ہیں کہ مقامی صنعت کو مزید فروغ دیا جائے۔سابقہ حکومت کی پالیسیوں کے باعث تجارتی خسارے میں اضافہ ہوا۔ انہوں نے کہا کہ ملکی برآمدات بڑھانے کیلئےبھرپور اقدامات کررہے ہیں۔ہم نے پاکستان کو دیوالیہ ہونے سے بچایا، سابق وزیراعظم عمران خان کی ناقص پالیسیوں کے باعث ملک اس نہج پر پہنچا۔ تحریک انصاف کی حکومت نے4 سال میں 20ہزار ارب کا قرضہ لیا، عمران خان کی حکومت نے ملکی تاریخ کا سب سے زیادہ قرضہ لیا، کوشش کررہے ہیں کہ کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ ایک سال میں سرپلس کردیں، عمران خان کی حکومت میں ٹیکس وصولیوں میں کمی ہوئی،تحریک انصاف کی حکومت نےبجٹ خسارے کو بڑھایا۔ہماری حکومت نے مشکل معاشی حالات میں بجٹ دیا ہے۔ درآمدات پر جو پابندیاں لگائی تھیں ان کو مرحلہ وار ختم کرینگے۔ انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف کی حکومت نے بجلی کی پیداوار کے منصوبوں میں کوئی سرمایہ کاری نہیں کی،تحریک انصاف کی حکومت نے معیشت کےشعبے میں کوئی اصلاحات نہیں کیں۔ عمران خان نےاپنے رفقاء کو ایمنسٹی اسکیم دی۔ تحریک انصاف کی حکومت نے آئی ایم ایف سے کیے معاہدے کی خلاف ورزی کی۔ملکی مفاد کیلئے سیاسی نقصان بھی برداشت کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ 50 لاکھ گھروں کا دعویٰ کرنے والے نے 500 گھر بھی نہیں بنائے،ایک کروڑ نوکریاں دینے والے نے 65لاکھ لوگوں کو بیروزگار کیا۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ گردشی قرضوں کو آپ نے 14سو ارب تک بڑھایا۔ عمران خان نے بجلی کے شعبے کے خسارے میں کمی نہیں کی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں