44

فوج اور 2 خاندانوں نے 60 سال حکومت کرکے ملکی حالات خراب کئے

فوج اور 2 خاندانوں نے 60 سال حکومت کرکے ملکی حالات خراب کئے
اسلام آباد(ایجنسیاں)تحریک انصاف کے انٹرا پارٹی انتخابات میں عمران خان پارٹی کے بلا مقابلہ چیئرمین منتخب ہوگئے۔بدھ کو جاری اعلامیے کے مطابق دیگر دو پینلز کے امیدواروں نے عمران خان کے حق میں انتخاب سے دستبرداری کا اعلان کیا جس کے بعد وہ پارٹی کے بلا مقابلہ چیئرمین منتخب ہوگئے۔ دستبردار ہونے والے ایک پینل کی سربراہی عمر سرفراز چیمہ اور دوسرے کی نیک محمد کررہے تھے۔انٹراپارٹی انتخابات میں شاہ محمود قریشی وائس چیئرمین اور اسدعمر مرکزی سیکرٹری جنرل منتخب ہوئے۔دریں اثناءسابق وزیراعظم اور تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے ایک بار پھرلانگ مارچ کی کال سپریم کورٹ کے فیصلے سے جوڑ دی۔بنی گالہ میں انٹرا پارٹی انتخابات کے بعد پی ٹی آئی نیشنل کونسل سے خطاب میں عمران خان کا کہنا تھاکہ سب تیاری کریں ‘چند روزمیں احتجا ج کی تاریخ کا اعلان کروں گا‘صرف سپریم کورٹ کا فیصلہ آنے کا انتظار ہے۔پی ٹی آئی چیئرمین نے کہا کہ 60 سال تک فوج اور2 خاندانوں نے ملک پر حکمرانی کی‘ان لوگوں نے ملکی حالات خراب کئے۔ ان کا کہنا تھاکہ ملک دشمن چاہتےہیں پی ٹی آئی اور فوج کمزور ہو‘ہمارے خلاف جو فورسز تھیں وہ شہباز شریف کی حکومت آنے سے آج بہت خوش ہیں‘عمران خان کا کہنا تھاکہ چوروں کو آئندہ الیکشن بھی جتوانے کی تیاری ہورہی ہے، الیکشن کمیشن پہلے ہی ساتھ تھا باقی ادارے بھی تباہ کیے جارہے ہیں‘ حکومت ہٹانے کی وجہ مہنگائی نہیں تھی، ان کا مسئلہ کرپشن کیسز ختم کرانا تھا۔انہوں نے کہاکہ پاکستان میں سیاسی پارٹیز نہیں خاندانی جماعتیں ہیں‘ اس خاندانی سیاست کی وجہ سے ہماری جمہوریت نے ترقی نہیں کی‘ یہاںسیاسی جماعتوں میں میرٹ نہیں ہے‘ جمہوریت کے نام پر جاگیردارانہ نظام رائج ہے۔ عمران خان کا مزیدکہناتھاکہ وہ شخص جو آئندہ انتخابات میں حکمراں جماعت سے ٹکٹ لینے کا امیدوار ہے اسے اپوزیشن لیڈر بنادیا، جس پارلیمنٹ میں اپوزیشن نہیں، وہ پارلیمنٹ کہاں رہی، وہ تو ختم ہوگئی۔ان حکمرانوں نے الیکشن کمیشن کو بھی سنبھال لیا جو پہلے ہی ان کے ساتھ تھا، اب ناجائز کام کو جائز کرانے کے لیے تما اداروں کو کمپرومائز کیا جائے گا۔ان چوروں کو اوپر لانے اور رکھنے کے لیے ملک کے تمام اداروں کی تباہی ہوگی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں