Seerat-ul-Nabi 36

سیرت خاتم الانبیاء محمد مصطفیٰ ﷺ – کفار کی عبرتناک شکست

حضرت بلال رضی اللّٰہ عنہ اسے دیکھ کر بلند آواز میں پکارے:کافروں کا سردار امیہ بن خلف یہ رہا…اگر امیہ بچ گیا تو سمجھو میں نہيں بچا۔حضرت عبدالرحمن بن عوف رضی اللہ عنہ کو امیہ اپنے بیٹے کے ساتھ ادھر ادھر بھاگتا نظر آیا تھا،حضرت عبدالرحمن بن عوف رضی اللہ عنہ کے ہاتھ میں کئی زرہیں تھیں ۔یہ مال غنیمت میدان جنگ سے ملا تھا،لیکن جونہی انہیں امیہ اور اس کا بیٹا نظر آیا،انہوں نے زرہیں گرادیں اور ان دونوں کو پکڑ لیا…اس طرح یہ دونوں اب ان کے قیدی بن گئے ۔یہ انہیں لیے جارہےتھے کہ حضرت بلال رضی الله عنہ نے انہیں دیکھ لیا اور پکارنے لگے: یہ رہا امیہ بن خلف۔حضرت بلال رضی الله عنہ کے الفاظ سنتے ہی حضرت عبدالرحمن بن عوف رضی اللہ عنہ نے کہا: لیکن یہ دونوں اب میرے قیدی ہیں ۔
حضرت بلال نے پھر وہی الفاظ کہے:
اگر آج امیہ بچ گیا تو سمجھو میں نہیں بچا ۔
ساتھ ہی حضرت بلال رضی اللہ عنہ نے لوگوں کو پکارا:
اے انصاریو!اے الله کے مددگارو!یہ کافروں کا امیہ بن خلف ہے۔اگر یہ بچ گیا تو سمجھو میں نہيں بچا۔
یہ سن کر انصاری ان کی طرف دوڑ پڑے،انہوں نے چاروں طرف سے انہیں گھیرلیا،حضرت بلال رضی اللّٰہ عنہ نے تلوار کھینچ لی اور اس پر وار کیا۔حضرت عبدالرحمن بن عوف رضی اللہ عنہ نے امیہ کو بچانے کے لیے اس کے بیٹے کو آگے کردیا ۔امیہ جاہلیت کے زمانے میں ان کا دوست تھا۔اسی دوستی کے ناتے حضرت عبدالرحمن بن عوف رضی الله عنہ اسے قتل ہونے سے بچانا چاہتے تھے۔ادھر حضرت بلال رضی الله عنہ پر اس کے قتل کی دھن پوری طرح سوار تھی ۔
حضرت بلال رضی الله عنہ کی تلوار امیہ کے بیٹے کو لگی اور وہ زخمی ہوکر گرا،اسے گرتا دیکھ کر امیہ بھیانک انداز میں چیخا ۔یہ چیخ حد درجے خوفناک اور ہولناک تھی، ساتھ ہی تلواریں بلند ہوئیں اور امیہ کے جسم میں اتر گئیں ۔امیہ کو بچانے کے سلسلے میں حضرت عبدالرحمن بن عوف رضی اللّٰہ عنہ خود بھی معمولی سے زخمی ہوئے ۔وہ کہا کرتےتھے”الله تعالٰی بلال پر رحم فرمائیں ،میرے حصے میں نہ زرہیں آئیں نہ قیدی۔ایسے میں حضور نبی کریم ﷺ نے دریافت فرمایا
کسی کو نوفل بن خویلد کا بھی پتہ ہے؟
جواب میں حضرت علي رضی اللہ عنہ نے عرض کیا:
الله کے رسول!اسے میں نے قتل کیا ہے۔
یہ سن کر آپ ﷺ نے ارشادفرمایا:
اللہ اکبر!اللّٰہ کا شکر ہے جس نے اس شخص کے بارے میں میری دعا قبول فرمائی۔جنگ شروع ہونے سے پہلے اس نوفل بن خویلد نے بلند آواز میں کہا تھا
اے گروہِ قریش!آج کا دن عزت اورسر بلندی کا دن ہے-اس کی بات سن کر آپ ﷺ نے فرمایا تھا:اے اللہ نوفل بن خویلد کا انجام مجھے دکھلا اس کے بعد رسول اللہ ﷺ نے حکم دیا:
قتل ہونے والے کافروں میں ابوجہل کی لاش کو تلاش کیا جائے”
ابوجہل نے جنگ شروع ہونے سے پہلے کہاتھا:
اے اللّٰہ!دونوں دینوں (یعنی اسلام اور کفار کے خود ساختہ دین) میں جو دین تیرے نزدیک افضل اور پسندیدہ ہو اسی کی مدد فرما اور نصرت فرما۔
حضرت معاذ بن عمرو جموح رضی اللّٰہ عنہ جو اس جنگ کے دوران کم سن صحابہ میں شمار ہوتےتھے،کہتے ہیں کہ جنگ کے دوران میں نے دیکھا کہ ابوجہل کو اس کے بہت سے ساتھی حفاظت کے لیے گھیرے میں لیے ہوئے ہیں اور وہ کہہ رہے تھے:اے ابو الحکم (ابوجہل کی کنیت تھی) تم تک کوئی نہیں پہنچ پائے گا۔
جب میں نے ان کی یہ بات سنی تو ابوجہل کی طرف بڑھا
اور اس پر تلوار کا ایک ہاتھ مارا۔اس وار سے اس کی پنڈلی کٹ گئی۔ابوجہل کے بیٹے حضرت عکرمہ رضی اللّٰہ عنہ باپ کی مدد کے لیے بڑھے۔(یہ حضرت عکرمہ رضی الله عنہ فتح مکہ کے موقع پر مسلمان ہوئے تھے)انھوں نے مجھ پر تلوار کا وار کیا۔اس سے میرا بازو کٹ گیا۔صرف تھوڑی سی کھال کے ساتھ بازو اٹکا رہ گیا۔میں جنگ میں مصروف رہا،لیکن لٹکنے والے ہاتھ کی وجہ سے لڑنا مشکل ہورہاتھا۔میں تمام دن لڑتا رہا اور وہ بازو لٹکتا رہا۔آخر جب اس کی وجہ سے رکاوٹ زیادہ ہونے لگی تو میں نے اپنا پاؤں اس پر رکھ کر جھٹکا دیا۔اس سے وہ کھال بھی کٹ گئی۔میں نے اپنے بازو کواٹھا کر پھینک دیا۔ابوجہل زخمی حالت میں تھا کہ اس دوران اس کے پاس معوذ بن عفراء رضی اللّٰہ عنہ گزرے۔انہوں نے اس پر وار کیا۔اس وار سے وہ گرگیا اور وہ اسے مردہ سمجھ کر آگے بڑھ گئے،لیکن وہ ابھي زندہ تھا۔
حضرت معوذ رضی اللہ عنہ جنگ کرتے آگے بڑھتے چلےگئے، یہاں تک کہ شہید ہوگئے۔اتنے میں زخموں سے چور ابوجہل کے پاس سے حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کا گزر ہوا۔انہوں نے اپنا پیر اس کی گردن پر رکھ کر کہا:
”اے خدا کے دشمن!کیا تجھے خدا نے رسوا نہیں کر دیا۔“
اس کے بعد حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ نےاس کا سر تن سے جدا کر دیا۔پھر حضور نبی کریم ﷺ کی خدمت میں حاضر ہوۓ اور عرض کیا:
”اے اللہ کے رسول!میں نےابو جہل کو قتل کیا ہے۔“
آپ ﷺ نے فرمایا:
”برتری اسی ذات باری تعالیٰ کے لئے ہے جس کے سوا کوئی معبود نہیں ۔“
آپ ﷺ نے یہ کلمہ تین بار فرمایا۔پھر آپ ﷺ نے ابو جہل کی تلوار حضرت عبدللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کو عطا فرما دی۔اس خوبصورت اور قیمتی تلوار پر چاندی کا کام کیا گیا تھا۔
بدر کی جنگ میں اللہ تعالیٰ نے فرشتوں کے ذریعے بھی مدد فرمائی تھی۔اس روز حضرت زبیر بن عوام رضی اللہ عنہ نے نہایت سرفروشی سے جنگ کی۔ان کے جسم پر بہت بڑے بڑے زخم آۓ۔
اس جنگ میں حضرت عکاشہ بن محصن رضی اللہ عنہ کی تلوار لڑتے لڑتے ٹوٹ گئی تو آنحضرت ﷺ نے انہیں کھجور کی ایک چھڑی عنایت فرمائی۔ وہ چھڑی ان کے ہاتھ میں آتے ہی معجزاتی طور پر ایک چمک دار تلوار بن گئی۔حضرت عکاشہ رضی اللہ عنہ اس تلوار سے لڑتے رہے یہاں تک کہ اللہ تعالیٰ نے مسلمانوں کو فتح عطا فرمائی۔اس تلوار کا نام عون رکھا گیا۔یہ تلوار تمام غزوات میں حضرت عکاشہ رضی اللہ عنہ کے پاس رہی اور اسی تلوار سے وہ جنگ کیا کرتے تھے۔ان کے انتقال کے بعد یہ تلوار ان کی اولاد کو وراثت میں ملتی رہی،ایک سے دوسرے کے پاس پہنچتی رہی۔
اسی طرح حضرت سلمہ بن اسلم رضی اللہ عنہ کی تلوار بھی ٹوٹ گئی تھی۔حضور اکرم ﷺ نے انہیں کھجور کی جڑ عطا فرمائی اور فرمایا:
”اس سے لڑو“
انہوں نے جونہی اس جڑ کو ہاتھ میں لیا،وہ ایک نہایت بہترین تلوار بن گئی اور اس غزوہ کے بعد ان کے پاس رہی۔
حضرت خبیب بن عبدالرحمن رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ ایک کافر نے میرے دادا پر تلوار کا وار کیا۔اس وار میں ان کی ایک پسلی الگ ہو گئی۔حضور اکرم ﷺ نے لعاب دہن لگا کر ٹوٹی پسلی اس کی جگہ رکھ دی۔وہ پسلی اپنی جگہ پر اس طرح جم گئی جیسے ٹوٹی ہی نہیں تھی۔
حضرت رفاعہ بن مالک رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ ایک تیر میری آنکھ میں آکر لگا،میری آنکھ پھوٹ گئی۔میں اسی حالت میں حضور اکرم ﷺ کی خدمت میں حاضر ہوا۔آپ ﷺ نے میری آنکھ میں اپنا لعاب دہن ڈال دیا،آنکھ اسی وقت ٹھیک ہو گئی اور زندگی بھر اس آنکھ میں کبھی کوئی تکلیف نہیں ہوئی۔
اب آپ ﷺ نے حکم فرمایا کہ مشرکوں کی لاشوں کو ان جگہوں سے اٹھا لایا جاۓ جہاں جہاں ان کے قتل ہونے کی نشان دہی کی تھی۔
حضرت عمر رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ نبی کریم ﷺ نے جنگ سے ایک دن پہلے ہی ہمیں بتا دیا تھا کہ ان شاءاللہ کل یہ عتبہ بن ربیعہ کے قتل کی جگہ ہوگی،یہ شیبہ بن ربیعہ کے قتل کی جگہ ہو گی۔یہ امیہ بن خلف کے قتل کی جگہ ہوگی۔
آپ ﷺ نے اپنے دست مبارک سے ان جگہوں کی نشان دہی فرمائی تھی۔۔۔اب جب لاشیں جمع کرنے کا حکم ملا اور صحابہ کرام لاشوں کی تلاش میں نکلے تو کافروں کی لاشیں بالکل انہی جگہوں پر پڑی ملیں ۔
حضور اکرم ﷺ نے ان تمام لاشوں کو ایک گڑھے میں ڈالنے کا حکم فرمایا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں