24

سعودیہ سے پہلی بار اسٹریٹجک پارٹنر شپ، علاقائی و عالمی امور پر حمایت کے عزم کا اعادہ، روس اور یوکرین کے سیاسی تصفیہ کی امید

اسلام آباد (نمائندہ نیوز) پاکستان اور سعودی عرب نے سلامتی واستحکام، تشدد، انتہاپسندی و دہشت گردی کے خاتمے، اتحاد کے فروغ، خطے کے ممالک کی خودمختاری اور ان کی جغرافیائی سالمیت کی حمایت کے عزم کا اعادہ کیاہے .
سعودی عرب ، پاکستان اور اس کی معیشت کی بہتری کے لئے مسلسل حمایت جاری رکھے گا .
سعودی عرب مرکزی بینک میں جمع کرائے گئے تین ارب ڈالر کی مدت میں توسیع اور اس میں اضافے ،پٹرولیم مصنوعات کی فنانسنگ مزید بڑھانے کے امکانات تلاش کرنے اور معاشی ڈھانچے کی اصلاحات میں مدد کرے گا ،دونوں ممالک نے خطے میں امن اور سلامتی کے لئے پاکستان اور بھارت کے درمیان جموں و کشمیر کے تنازع سمیت تمام مسائل بات چیت کے ذریعے حل کی ضرورت پر زور دیا .
دونوں ممالک نے روس اور یوکرائن کے تنازع کے سیاسی تصفیے اور بحران کے خاتمے کی امید ظاہر کرتے ہوئے سلامتی کونسل کی قرارداد کے مطابق یمن بحران کے جامع سیاسی حل کے اقدامات ، فلسطین کے مسئلے پر متعلقہ قراردادوں اور عرب امن اقدام کے مطابق جامع اور منصفانہ حل ، شام میں علاقائی مداخلت کو محدود کرنے اور افغانستان کی سرزمین کو دہشت گرد گروپوں کے لئے محفوظ پناہ کے طور پر استعمال سے بچائو کی ضرورت پر زور دیا ۔
اتوار کو وزیراعظم محمد شہبازشریف کے تین روزہ سرکاری دورہ سعودی عرب کے اختتام پر جاری کئے گئے مشترکہ اعلامیہ میں کہا گیا ہے کہ وزیراعظم پاکستان محمد شہبازشریف نے سعودی عرب اور اسلامی جمہوریہ پاکستان کے درمیان استوار قریبی برادرانہ تعلقات کے تناظر میں 28سے 30اپریل 2022تک سعودی عرب کا دورہ کیا۔
سعودی عرب کے ولی عہد اور نائب وزیراعظم شہزاد محمد بن سلمان بن عبدالعزیز آل سود نے جدہ میں وزیراعظم کا استقبال کیا۔فریقین میں باضابطہ سرکاری ملاقات ہوئی جس میں دونوں ممالک کے درمیان استوار تاریخی تعلقات اور تمام شعبہ جات میں قریبی تعاون کا جائزہ لیا گیا اور تمام شعبوں میں تعلقات کو مزید مضبوط بنانے کے طریقوں پر غور کیاگیا۔
دوطرفہ تعلقات کے تناظر میں دونوں اطراف نے سعودی پاکستانی سپریم کوآرڈی نیشن کونسل کے ذریعے امور کار کو مضبوط بنانے، دونوں برادر ممالک کے درمیان تجارتی تبادلوں کو متنوع بنانے اور دونوں ممالک کے نجی شعبوں کے درمیان رابطوں اور بات چیت بڑھانے کی اہمیت پر زور دیا تاکہ تجارت اور سرمایہ کاری کے مواقع کو حقیقی وعملی شراکت داری میں تبدیل کیاجائے۔مشترکہ اعلامیہ میں کہا گیا ہے کہ سعودی عرب نے اس عزم کا اعادہ کیا کہ وہ پاکستان اور اس کی معیشت کی مسلسل حمایت جاری رکھے گا۔
اس بات چیت میں مرکزی بینک میں جمع کرائے گئے 3ارب امریکی ڈالر کی مدت میں توسیع کے ذریعے ان میں اضافے، پٹرولیم مصنوعات کی فنانسنگ مزید بڑھانے کے امکانات تلاش کرنے، پاکستان اور اس کے عوام کے مفاد میں معاشی ڈھانچے کی اصلاحات کیلئے مدد جاری رکھناشامل تھا۔
پاکستان نے بھرپور مدد اور حمایت جاری رکھنے پر سعودی عرب کو زبردست خراج تحسین پیش کیا۔ فریقین نے دونوں ممالک کے درمیان سرمایہ کارانہ تعاون کو مزید گہرا کرنے، شراکت داریوں میں اضافے اور دونوں ممالک کے نجی شعبے کے درمیان مل کر سرمایہ کاری کرنے کے امکانات بڑھانے پر اتفاق کیا۔
دونوں ممالک کے درمیان سرمایہ کاری کا ماحول تیار کرنے اور باہمی دلچسپی کے سرمایہ کاری کے متعدد شعبوں میں مشترکہ کوششیں کرنے پر بھی اتفاق کیاگیا۔
اعلامیہ میں کہا گیا ہے کہ فریقین نے دونوں ممالک کی قیادت کی بصیرت کی روشنی میں اپنے اسٹرٹیجک مفاد میں صنعت اور کان کنی کے شعبوں میں تعاون بڑھانے اور مضبوط بنانے کی اہمیت پر زور دیا جس کا مقصد دونوں ممالک کے درمیان تعاون میں اضافہ کرنا ہے۔
اطراف نے سرمایہ کاری فورمز کے انعقاد کے ارادے کا اظہار کیا تاکہ دونوں ممالک کے کاروباری شعبے میں دستیاب امکانات سامنے لائے جاسکیں، ان پر زور دیاجائے کہ سرمایہ کاری کے مختلف شعبوں میں انوسٹمنٹ پارٹنر شپ کریں، سعودی پاکستانی بزنس کونسل کے اجلاسوں کے ذریعے مل کر کام کریں تاکہ ان مشکلات کو دور کیاجائے جو سرمایہ کاروں کو درپیش آتی ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں