44

تیل کی عالمی قیمتیں کتنی بڑھیں گی؟

تیل کی عالمی قیمتیں کتنی بڑھیں گی؟
بعض معاشی ماہرین اس ماہ کے اختتام تک پیٹرول کی قیمت 260 روپے فی لیٹر تک پہنچنے کی پیش گوئی کر رہے ہیں۔
پاکستان میں گاڑیوں اور موٹر سائیکوں کے مالکان کو پیٹرول کی قیمت کی مد میں یکے بعد دیگرے شدید جھٹکے لگ رہے ہیں۔ اب حکومت نہ اختتام مہینہ اور نہ دو ہفتوں کا انتظار کر رہی ہے۔ بعض معاشی ماہرین اس ماہ کے اختتام تک پیٹرول کی قیمت 260 روپے فی لیٹر تک پہنچنے کی پیش گوئی کر رہے ہیں، تو آخر تیل کی عالمی منڈی میں قیمتیں کہاں تک جائیں گی؟
تیل پیدا کرنے والے ممالک کی تنظیم (اوپیک) اور اتحادی پروڈیوسرز نے گذشتہ دنوں 4 لاکھ 32 ہزار بیرل یومیہ کی حد سے بڑھا کر آنے والے مہینوں میں تیل کی پیداوار میں 6 لاکھ 48 ہزار بیرل یومیہ اضافے کے منصوبوں کا اعلان کیا تھا۔ تاہم تجزیہ کاروں نے پیش گوئی کی ہے کہ اوپیک کی جانب سے پیداوار میں اضافے کے وعدے کے باوجود تیل کی قیمتوں میں مزید اضافہ ہوگا جسے وہ امریکی موسم گرما میں طلب میں اضافے، چین میں کووڈ 19 لاک ڈاؤن میں نرمی اور روسی رسد پر غیریقینی صورت حال کے پیش نظر ناکافی سمجھتے ہیں۔
سعودی عرب کی تیل اور گیس کی بڑی کمپنی سعودی آرامکو نے غیر متوقع طور پر ایشیا کے لیے اپنی فروخت کی قیمتوں میں اضافہ کر دیا ہے جس سے رسد سخت کرنے پر عالمی خدشات پیدا ہوگئے ہیں۔
آرامکو نے اتوار کو اعلان کیا کہ دنیا کے سب سے بڑے تیل برآمد کنندہ نے جون کی سطح سے اپنے فلیگ شپ عرب لائٹ کروڈ کی جولائی کی سرکاری قیمت میں 2.10 ڈالر فی بیرل کا اضافہ کیا ہے۔ روئٹرز نے تجزیہ کاروں کا حوالہ دیتے ہوئے کہاہے کہ رپورٹ کے مطابق یہ اضافہ مارکیٹ کے 1 سے 1.50 ڈالر کے اقدام کی مارکیٹ توقعات سے کہیں زیادہ تھا۔
خام تیل کی قیمتوں میں عام طور پر موسمی طلب اور رسد کی بنیاد پر اتار چڑھاؤ آتا ہے۔ حال ہی میں کووڈ 19 وبائی مرض کی وجہ سے مانگ میں کمی کے بعد اقتصادی بحالی جاری ہے جس کی وجہ سے تیل کی قیمتیں عالمی سطح پر غیریقینی صورت حال کا شکار ہو رہی ہیں۔
تیل کی موجودہ قیمتیں
آئل پراسس ڈاٹ کام کے مطابق منگل صبح 9 بجے (پاکستان معیاری وقت) تیل کی قیمتیں یہ ہیں۔
خام تیل کے دو درجات ہیں جو دیگر تیل کی قیمتوں کے لیے بینچ مارک کے طور پر استعمال ہوتے ہیں۔
ویسٹ ٹیکساس انٹرمیڈیٹ (ڈبلیو ٹی آئی) اور نارتھ سی برینٹ میں۔ ڈبلیو ٹی آئی امریکہ سے آتا ہے اور امریکی تیل کی قیمتوں کا معیار ہے۔ نارتھ سی برینٹ کا تیل شمال مغربی یورپ سے آتا ہے اور تیل کی بین الاقوامی قیمتوں کا معیار ہے۔
بین الاقوامی سطح پر، مارچ 2022 میں برینٹ خام تیل کی قیمتوں کی اوسط تقریباً 117 ڈالر فی بیرل تھی، جو فروری کی اوسط سے 20 ڈالر فی بیرل زیادہ ہے۔ امریکی انرجی انفارمیشن ایڈمنسٹریشن (ای آئی اے) کے 12 اپریل 2022 کو جاری کردہ شارٹ ٹرم انرجی آؤٹ لک کے مطابق، 2022 میں قیمتیں اوسطاً 103.37 ڈالرز فی بیرل ہونے کی توقع ہے۔ یہ 2021 میں 70.89 ڈالر کی سالانہ اوسط سے زیادہ ہے۔
ویسٹ ٹیکساس انٹرمیڈیٹ اوسط فروری 2022 میں فی بیرل 91.64 ڈالر اور مارچ میں اوسطاً 108.50 ڈالر فی بیرل تک بڑھ گیا ہے۔
ای آئی اے نے پیش گوئی کی ہے کہ ڈبلیو ٹی آئی قیمتیں 2022 میں اوسطاً 97.96 ڈالر فی بیرل ہوں گی جو کہ 2021 میں 68.21 ڈالر سے زیادہ ہوگی۔
امریکی ادارے انرجی انفارمیشن ایڈمنسٹریشن (ای آئی اے) نے یہ بھی رپورٹ کیا کہ دسمبر 2021 میں عالمی تیل اور مائع ایندھن کی طلب 102.30 ملین ڈالر فی بیرل تھی۔ یہ دسمبر 2020 سے 7.47 ملین ڈالر فی بیرل کا اضافہ ہے، لیکن دسمبر 2019 کے مقابلے میں صرف 0.57 ملین ڈالر فی بیرل زیادہ ہے۔ تاہم، ڈبلیو ٹی آئی توقع ہے کہ 2022 میں طلب میں کمی آئے گی، جو سالانہ اوسط 99.80 ملین ڈالر فی بیرل تک پہنچ جائے گی۔
پیر کو برینٹ کروڈ بینچ مارک کی قیمت 120 ڈالر فی بیرل سے 42 سینٹس بڑھ گئی جبکہ امریکی بینچ مارک ویسٹ ٹیکساس انٹرمیڈیٹ (ڈبلیو ٹی آئی) 35 سینٹ اضافے کے ساتھ 119 ڈالر فی بیرل سے اوپر ٹریڈ کر رہا تھا جو تین ماہ کی بلند ترین سطح کے قریب ہے۔
بیلنس ویب سائٹ کے مطابق برینٹ خام تیل کی قیمتیں 2021 میں کم شروع ہوئیں، جنوری میں اوسطاً 54.77 ڈالر فی بیرل تھی۔ لیکن وہ دوسری سہ ماہی میں بڑھی اور اپریل 2021 میں 67.73 ڈالر فی بیرل پر بند ہوئی۔ امریکہ میں ویسٹ ٹیکساس انٹرمیڈیٹ (ڈبلیو ٹی آئی) نے اسی طرح کا مظاہرہ کیا اور اپریل میں 63.50 ڈالر فی بیرل پر بند ہوا۔
تیسری سہ ماہی میں قیمتوں میں بڑے پیمانے پر اضافہ دیکھا گیا، نومبر کے اوائل میں برینٹ کی قیمتیں 84.52 ڈالر فی بیرل کی بلندی تک بڑھ گئیں، اور ڈبلیو ٹی آئی اکتوبر کے آخر میں 85.64 ڈالر فی بیرل تک پہنچ گئیں۔ 2021 کے آخر تک برینٹ 77.24ڈالر فی بیرل اور ڈبلیو ٹی آئی 75.33ڈالر فی بیرل میں فروخت ہوا۔
پیشن گوئی 2025 سے 2050 تک
امریکی ادارے انرجی انفارمیشن ایڈمنسٹریشن (ای آئی اے) نے پیش گوئی کی ہے کہ 2025 تک برینٹ خام تیل کی قیمت 66 ڈالر فی بیرل تک بڑھ جائے گی۔
2030 تک عالمی طلب برینٹ کی قیمتوں کو 89 ڈالر فی بیرل تک لے جاتی نظر آ رہی ہے۔ 2040 تک قیمتیں 132 ڈالر فی بیرل متوقع ہیں۔ تب تک تیل کے سستے ذرائع ختم ہو چکے ہوں گے، جس سے تیل نکالنا مہنگا ہو جائے گا۔ 2050 تک تیل کی قیمتیں 185ڈالر فی بیرل تک ہوسکتی ہیں۔
ڈبلیو ٹی آئی فی بیرل قیمت 2025 تک بڑھ کر 64 ڈالر فی بیرل، 2030 تک 86 ڈالر، 2040 تک 128 ڈالر اور 2050 تک 178 ڈالر تک بڑھنے کی توقع ہے۔
ای آئی اے کا خیال ہے کہ پیٹرولیم کی مانگ کم ہو جاتی ہے جب یوٹیلیٹیز قدرتی گیس اور قابل تجدید توانائی پر زیادہ انحصار کرتی ہیں۔
پاکستان میں معاشی امور کے ماہر ڈاکٹر اشفاق حسن خان نے ایک نجی ٹی وی کے ساتھ گفتگو میں کہا کہ ملک میں جون کے اختتام تک تیل کی سیمت 260 روپے فی لیٹر ہوسکتی ہے۔
مستقبل میں تیل کی قیمتوں کا بہت زیادہ انحصار توانائی، نقل و حمل اور دیگر صنعتوں میں اختراعات پر ہوگا کیونکہ قابل تجدید ایندھن پر انحصار کرنے کے لیے کام کرتے ہیں۔
جے پی مورگن نے پانچ مئی کو تیل کی بڑھتی قیمتوں، بگڑتے ہوئے نمو اور جغرافیائی سیاسی تناؤ میں اضافے کا حوالہ دیتے ہوئے 2022 کے لیے عالمی تیل کی طلب میں 10 لاکھ بیرل یومیہ (بی پی ڈی) کی کمی کی پیش گوئی کی۔
بینک نے ایک نوٹ میں کہا، ’اب ہم دیکھتے ہیں کہ تیل کی کل طلب اوسطاً 100 ملین bpd، 400,000 bpd 2019 کی سطح سے نیچے ہے۔‘

جے پی ایم نے اس سال کی دوسری سہ ماہی میں اپنی برینٹ قیمت کی پیش گوئی 114 ڈالر فی بیرل اور کیلنڈر 2022 کے لیے 104 ڈالر فی بیرل پر برقرار رکھی۔
تاہم سٹی ریسرچ نے پیر کو اس سال کے لیے تیل کی سہ ماہی قیمت کی پیشن گوئی اور 2023 کے لیے اس کے سال کے اوسط آؤٹ لک میں اضافہ کیا کیونکہ ایران سے اضافی سپلائی میں بہت زیادہ تاخیر ہوئی جس سے مارکیٹ کے توازن میں اضافہ ہوا۔
سٹی نے کہا کہ ایران کی پابندیوں میں نرمی میں تاخیر توازن کو خراب کرنے کا بنیادی عنصر ہے۔
غیرمستحکم تیل کی قیمتوں کی پانچ وجوہات
تیل کی قیمتوں میں ایک متوقع موسمی جھول ہوتا تھا۔ موسم بہار میں ان میں اضافہ ہوا کیوں کہ تیل کے تاجروں نے موسم گرما کی تعطیلات میں ڈرائیونگ کی زیادہ مانگ کی توقع کی تھی۔ ایک بار جب طلب عروج پر پہنچ جاتی ہے تو موسم خزاں اور سردیوں میں قیمتیں گر جاتی ہیں۔
عالمی سطح پر سپلائی اور قیمتیں بھی جغرافیائی سیاسی تنازعات اور شہری بدامنی سے بہت متاثر ہوتی ہیں۔
بہت سے عوامل کی وجہ سے آج تیل کی قیمتیں زیادہ غیرمستحکم ہیں، لیکن پانچ سب سے زیادہ اثر انداز ہیں۔
یوکرین پر روسی حملہ
روس مائع ایندھن اور پیٹرولیم پیدا کرنے والا تیسرا سب سے بڑا ملک ہے، لہذا جب فروری 2022 کے آخر میں اس ملک نے یوکرین پر حملہ کیا تو اس کا فوری اثر برینٹ خام تیل کی مستقبل کی قیمتوں پر پڑا۔ 10 جیسا کہ تنازعہ جاری رہا، خام تیل کی قیمتیں اوپر کی طرف بڑھ گئیں، مارچ کے شروع میں تقریباً 130 ڈالر فی بیرل تک پہنچ گئیں اور اپریل تک 100 ڈالر فی بیرل سے اوپر رہیں۔
امریکی تیل کی فراہمی
کورونا (کرونا) وائرس وبائی امراض اور قدرتی واقعات اب بھی تیل کی طلب اور رسد کو متاثر کر رہے ہیں۔ امریکہ کو ستمبر میں سمندری طوفان آئیڈا کے بعد پیداوار میں کمی کا سامنا کرنا پڑا کیونکہ طوفان نے کم از کم نو ریفائنریز بند کر دی تھیں۔
ای آئی اے کا تخمینہ ہے کہ 2022 میں امریکی خام تیل کی پیداوار اوسطاً 12.01 ملین ڈالر فی بیرل اور 2023 میں 12.95 ملین ڈالر فی بیرل رہے گی۔
اوپیک کی پیداوار میں کمی
تیل کی قیمتوں میں اضافہ پٹرولیم برآمد کرنے والے ممالک کی تنظیم (OPEC) اور OPEC کے پارٹنر ممالک کی طرف سے سپلائی کی حدود کو بھی ظاہر کرتا ہے۔ 2020 میں اوپیک نے وبائی امراض کے دوران مانگ میں کمی کی وجہ سے تیل کی پیداوار میں کمی کی۔ اس نے 2021 اور 2022 تک تیل کی پیداوار میں بتدریج اضافہ کیا۔ 2021 کے آخر میں سپلائی چین میں رکاوٹوں نے عالمی تجارت کو بھی متاثر کیا۔
دسمبر 2021 میں اپنے تازہ ترین اجلاس میں اوپیک نے کہا کہ وہ جنوری 2022 میں تیل کی پیداوار کو بتدریج 0.4 ملین ڈالر فی بیرل یومیہ تک ایڈجسٹ کرنا جاری رکھے گا۔
قدرتی گیس
ایشیا کے ممالک نے بجلی پیدا کرنے کے لیے کوئلے پر انحصار کیا ہے، لیکن حالیہ قلت نے انہیں قدرتی گیس کی طرف موڑ دیا ہے۔ ایشیا اور یورپ کے کچھ حصوں میں زیادہ درجہ حرارت نے بجلی پیدا کرنے کے لیے قدرتی گیس کی مانگ میں اضافہ کیا ہے۔
کرونا نے یورپ کی قدرتی گیس کی پیداوار کو متاثر کیا ہے، اور 2021 کے اوائل میں توقع سے زیادہ سرد گرمی نے سپلائی کو مزید کم کر دیا ہے۔
نتیجتاً، 2021 میں قدرتی گیس کی قیمتیں بڑھ گئیں اور 2022 میں زیادہ رہنے کی توقع ہے، اور متاثرہ ممالک نے بجلی کی پیداواری لاگت کو کم کرنے کے لیے گیس سے تیل کی تبدیلی کا رخ کیا ہے۔
عالمی انوینٹری
جیسا کہ عالمی سطح پر تیل کی پیداوار میں کمی جاری ہے، ممالک اپنے ذخیرہ شدہ ذخائر (سٹریٹجک پٹرولیم کے ذخائر کو شامل نہیں) کو استعمال کرنے پر مجبور ہیں۔ تیل کی یہ مسلسل ڈرا قیمتوں میں اضافے کا سبب بن رہی ہے کیوں کہ انوینٹریز کم ہو رہی ہیں۔
کیا کسی راحت کا امکان ہے؟
ماہرین کہتے ہیں کہ پٹرول کی بڑھتی ہوئی قیمتوں کو روکنے کے لیے طلب کو کم کرنا ہی واحد بڑا حل ہو سکتا ہے۔ ماہرین انفرادی اور اجتماعی سطح پر پیٹرول کے استعمال میں کمی لانے کا مثبت سمجھتے ہیں۔
اکثر پوچھے گئے سوالات
خام تیل کیا ہے؟
خام تیل زمین کی سطح کے نیچے پایا جانے والا مائع ہے۔ یہ ہائیڈرو کاربن کے مرکب سے بنا ہے جو نامیاتی پودوں اور جانوروں کے مواد کو لاکھوں سالوں کی شدید گرمی اور دباؤ سے مشروط کرتا ہے۔ یہ بہت سی پٹرولیم مصنوعات بشمول پلاسٹک، گیس، اور چکنا کرنے والے تیل کی بنیاد بناتا ہے۔
وہ کیا عمل ہے جو خام تیل کو پٹرول میں بدل دیتا ہے؟
ریفائنری کا عمل خام تیل کو پٹرول جیسی مصنوعات میں بدل دیتا ہے۔
آپ خام تیل میں کیسے سرمایہ کاری کرتے ہیں؟
تیل کی صنعت میں سرمایہ کاری کرنے کے بہت سے طریقے ہیں، لیکن خام تیل میں بطور کموڈٹی سرمایہ کاری کرنے کا سب سے سیدھا طریقہ مستقبل کے معاہدوں کے ساتھ ہے۔ آپ ETF میں بھی سرمایہ کاری کر سکتے ہیں جو خام تیل کے مستقبل کی نمائش کو نقل کرتا ہے۔
تیل کے ایک بیرل میں کتنے لیٹر ہوتے ہیں؟
تیل کے ہر بیرل میں 158 لیٹر ہوتے ہیں۔
پاکستان کی موجودہ صورت حال
پاکستان کے وفاقی دارالحکومت اور دیگر شہروں میں پیٹرول کی قیمتوں میں اضافے کی افواہوں کی وجہ سے پیٹرول پمپس پر لمبی قطاریں لگی ہوئی ہیں اور لوگ اپنی سواریوں میں پیٹرول بھروانے کے لیے انتظار کر رہے ہیں۔
لاہور میں نامہ نگار ارشد چوہدری نے اب سے کچھ دیر قبل ایک پیٹرول پمپ کا دورہ کیا جہاں لوگوں کی قطاریں موجود تھیں۔ انہوں نے وہاں عوام سے بھی گفتگو کی ہے۔
دوسری جانب وفاقی وزیر اطلاعات مریم اورنگزیب کا کہنا ہے کہ ‏پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کی قیاس آرائیاں قطعی جھوٹ ہیں۔
ان کا کہنا ہے کہ ’حکومت نے پٹرول اور ڈیزل کی قیمت میں مزید اضافے کا کوئی فیصلہ نہیں کیا ہے۔ عوام اور میڈیا سے درخواست ہے کہ افواہوں پرکان نہ دھریں۔‘
انہوں نے واضح کیا ہے کہ ملک میں پٹرولیم مصنوعات کی کوئی قلت نہیں اور اس معاملے میں افواہیں نہ پھیلائی جائیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں