111

بھارتی سپریم کورٹ نے تحریفِ قرآن کی درخواست مسترد کر دی

بھارت میں اھلِ تشیّع وسیم رضوی کی تحریفِ قرآن کی درخواست مسترد کرتے ہوئے تاریخ ساز فیصلہ سنا دیا ہے ۔بھارتی سپریم کورٹ نے قرآن مجید سے آیات نکالنے کی درخواست مسترد کر دی ہے ۔ درخواست غیر سنجیدہ قرار دی گئی ہے ۔ درخواست گزار پر 50 ہزار روپے جرمانہ بھی عائد کر دیا گیا ہے ۔

بھارتی سپریم کورٹ نے قرآن مجید سے آیات نکالنے کی درخواست کو مسترد کرتے ہوئے درخواست گزار پر جرمانہ بھی عائد کر دیا ہے ۔ غیر ملکی میڈیا کے مطابق بھارتی ریاست اترپردیش شیعہ وقف بورڈ کے سابق چئیرمین وسیم رضوی نے گذشتہ ماہ بھارتی سپریم کورٹ میں ایک درخواست دائر کی تھی، جس میں وسیم رضوی نے بھارتی سپریم کورٹ سے مطالبہ کیا تھا کہ قرآن مجید سے 26 آیات کو ہٹا دیا جائے۔

وسیم رضوی نے عدالت میں دائر کی گئی درخواست مں مؤقف اختیار کیا تھا کہ ان آیات میں جہاد کا ذکر ھے۔ جہاد سے متعلق قرآن کے اس بیان سے انتہا پسندی اور دہشت گردی کو فروغ ملتا ھے اور یہ سب بھارت کی سالمیت کے لیے خطرہ ھے۔ لہٰذا ان آیات کو قرآن مجید میں سے ھٹا دیا جائے۔

بھارتی سپریم کورٹ کے تین رکنی بنچ نے وسیم رضوی کی اس درخواست پر سماعت کی جس کے بعد اس درخواست کو غیر سنجیدہ قرار دیتے ہوئے مسترد کردیا اور ساتھ ھی فیصلے میں وسیم رضوی پر 50 ھزار روپے کا جرمانہ بھی عائد کردیا۔

دورانِ سماعت بھارتی سپریم کورٹ کے جج نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ یہ ایک غیر سنجیدہ درخواست ھے۔ کیا درخواست گزار کے وکیل اس درخواست سے متعلق سنجیدہ ہیں؟ جس پر وسیم رضوی نے اس درخواست کے حق میں دلائل دینے کے بجائے بھارت میں اسلامی مدارس اور ان میں دی جانے والی تعلیم کے معاملے پر بحث شروع کردی، جسے بنچ نے غیر ضروری دلائل قرار دے کر مسترد کر دیا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں