44

ایف اے ٹی ایف اہداف مکمل پاکستان کو فائدہ کیا ہوگا؟

ایف اے ٹی ایف اہداف مکمل پاکستان کو فائدہ کیا ہوگا؟
فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کے برلن میں منعقدہ تین روزہ اجلاس میں پاکستانی حکومت کے کچھ اعلیٰ عہدے داروں نے بھی شرکت کی۔بعض ماہرین کے خیال میں گرے لسٹ سے نکلنے کے بعد پاکستان کے لئے معاشی اور مالی فوائد کے راستے کھل سکتے ہیں۔فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کے اجلاس کے بعد پاکستان کے کئی حلقوں میں گرے لسٹ سے نکلنے کے امکانات پر بحث ہو رہی ہے اور دوسری طرف کچھ ماہرین اس بات پر بھی غور و فکر کر رہے ہیں کہ اگر پاکستان اس لسٹ سے نکل جاتا ہے تو اسے کس نوعیت کے معاشی، سیاسی اور مالی فائدہ ہو سکتے ہیں۔
واضح رہے کہ فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کا اجلاس تین روز منگل سے جمعرات تک برلن میں منعقد ہوا تھا۔
پاکستانی میڈیا کی بعض رپورٹوں میں دوعوی کیا گیا ہےکہ پاکستان کو گرے لسٹ سے نکال دیا گیا ہے۔ تاہم وزارت خارجہ اور وزارت اطلاعات کے ذرائع نے میڈیا کو تلقین کی کہ وہ اس بارےمیں قیاس آرائی سے گریز کرے۔ وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات مریم اورنگزیب نے اپنی ایک ٹویٹ میں میں کہا کہ اس حوالے سے کل یعنی ہفتے کے روز سرکاری طور پر ایک پریس کانفرنس کی جائے گی۔ انہوں نے میڈیا سے درخواست کی کہ وہ اس حوالے سے قیاس آرائی سے گریز کریں۔ وزیر مملکت برائے خارجہ امور حنا ربانی کھر نے بھی اپنی ایک ٹوئیٹ میں بھی اسی نوعیت کا ایک پیغام دیا۔
واضح رہے کہ پاکستان گزشتہ کچھ برسوں سے ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ میں ہے، جس کو پاکستان میں کئی حلقے سیاسی حربہ قرار دیتے ہیں۔ تاہم معاشی اور مالی امور کے ماہرین اس مسئلے کو سنجیدگی سے لیتے ہیں اور ان کے خیال میں گرے لسٹ سے نکلنے کے بعد پاکستان کے لئے معاشی اور مالی فوائد کے راستے کھل سکتے ہیں۔
ساکھ بہتر ہوگی
سابق وزیر خزانہ اور معاشی امور کے ماہر سلمان شاہ کا کہنا ہے کہ اگر پاکستان ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ سے نکل جاتا ہے، تو اس کا سب سے بڑا فائدہ یہ ہوگا کہ ملک کی ساکھ بہتر ہوگی۔ انہوں نےبتایا، ”گرے لسٹ میں ہونے کی وجہ سے آپ کے بینکنگ نظام اور مالی نظام پر سوالات اٹھائے جاتے ہیں۔ اگر پاکستان کو گرے لسٹ سے ہٹا دیا جاتا ہے تو ان سوالات کی گنجائش بھی نہیں رہے گی اور منی لانڈرنگ کے حوالے سے جو اعتراضات اٹھائے جارہے تھے، ان اعتراضات کا بھی خاتمہ ہو جائے گا، جس سے سرمایہ کاروں کا پاکستان کی مارکیٹ پر اعتماد بڑھے گا اور ممکنہ طور پر ملک میں مزید سرمایہ کاری آسکتی ہے۔‘‘
مغربی سرمایہ کاری کا امکان
لاہور سے تعلق رکھنے والے ماہر معیشت ڈاکٹر قیس اسلم کا کہنا ہے ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ میں سے نکلنے کے بعد پاکستان کے لیے یورپی ممالک کی سرمایہ کاری کی راہ ہموار ہوسکتی ہے۔ انہوں نے بتایا، ”چین نے گرے لسٹ میں ہونے کے باوجود بھی پاکستان میں سرمایہ کاری کیونکہ چین پاکستان کا بہت قریبی دوست تھے۔ لیکن مغربی ممالک ایف اے ٹی ایف کے مسئلہ کو بہت سنجیدگی سے لیتے ہیں اور وہ ایسے ممالک میں سرمایہ کاری کرنے سے اجتناب برتتے ہیں، جو ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ میں ہوں کیونکہ ان کو ڈر ہوتا ہے کہ کل اگر یہ ملک بلیک لسٹ میں چلا گیا، تو ان کا سارا سرمایہ ڈوب جائے گا۔ ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ میں سے نکلنے کے بعد امکان ہے کہ یورپی یونین کے ممالک اور مغرب ممالک پاکستان میں سرمایہ کاری کے لئے آئیں گے۔‘‘
ڈاکٹر قیس اسلم کے مطابق اس کے لیے ضروری ہے کہ حکومت سرمایہ کاری کی مناسب سہولیات فراہم کرے۔ ”کئی مغربی ممالک کے کی سرمایہ کار سیاحت، مذہبی سیاحت اور دوسرے شعبہ جات میں سرمایہ کاری کر سکتے ہیں۔ اگر حکومت نے اس حوالے سے مناسب پالیسی بنائی تو قومی امکان ہے کہ وہ ان کو پاکستان کی طرف متوجہ کرنے میں کامیاب ہو جائے۔‘‘
کوئی فرق نہیں پڑے گا
تاہم کچھ ناقدین کا خیال ہے کہ ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ میں سے نکلنے کے بعد بھی پاکستان کو اقتصادی طورپر کوئی خاص فرق نہیں پڑے گا۔ اسلام آباد سے تعلق رکھنے والے معروف معیشت دان اور سابق وزیراعظم عمران خان کی اقتصادی کونسل کے رکن ڈاکٹر اشفاق حسن خان کا کہنا ہے کہ ایف اے ٹی ایف میں پاکستان کو ر کھنا ایک سیاسی حربہ تھا۔ انہوں نے بتایا، ”یہ تاثر غلط ہے کہ ایف اے ٹی ایف میں ہونے کے بعد آپ کے ملک میں سرمایہ کاری نہیں ہوگی۔ پاکستان 2004 ء سے وقتاﹰ فوقتاﹰ ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ میں رہا ہے۔ لیکن دو ہزار چار، پانچ، چھ اور سات میں پاکستان میں اچھے خاصی سرمایہ کاری ہوئی ہے۔ تو میرے خیال میں پاکستان پرکوئی خاص فرق نہیں پڑے گا۔‘‘

اپنا تبصرہ بھیجیں