27

اوگرا کی سمری مسترد، وزیراعظم کا پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں نہ بڑھانے کا فیصلہ

اسلام آباد (ٹی وی رپورٹ‘ایجنسیاں) وزیراعظم شہباز شریف کی زیرصدارت اجلاس میں چینی کی برآمد پر پابندی عائد کرنے کا فیصلہ کرلیا گیا ۔ذرائع کے مطابق چینی کی برآمد پر پابندی رواں سال کے دوران نافذ رہے گی۔ذرائع کے مطابق اجلاس میں بریفنگ دی گئی کہ ملک میں چینی کا وافر اور اضافی ذخیرہ موجود ہے، برآمد پر پابندی کا مقصد چینی کی قیمتوں میں کمی اورعوام کو ریلیف دینا ہے۔ دریں اثناءجمعہ کو پی ڈی ایم کی قیادت اور ارکان پارلیمنٹ کے اعزاز میں منعقدہ افطار ڈنر سے خطاب کرتے ہوئےشہبازشریف کا کہنا تھاکہ انہوں نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کی سمری مسترد کرتے ہوئے قیمتیں نہ بڑھانے کا فیصلہ کیا ہے ‘ہم لوگوں پر مزیدبوجھ نہیں ڈال سکتے ‘حکومت عوام کو ریلیف فراہم کرتی رہے گی‘گزشتہ حکومت نے جان بوجھ کر پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں نہیں بڑھائیں، پیٹرولیم مصنوعات پر کوئی درمیانی راستہ نکالیں گے ‘ حقائق عوام کے سامنے رکھیں گے‘سابق حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات پر سبسڈی تو دی لیکن ریلیف کے لیے خاطر خواہ مالی وسائل مختص نہیں کئے‘ وزیراعظم نے مزید کہا کہ چینی باہر نہیں جانے دوں گا، عوام کو مہنگائی سے نجات دلانے کی ہر ممکن کوشش کریں گے‘ ذخیرہ اندوزوں کے خلاف کارروائی ہوگی۔شہبازشریف کا کہنا تھاکہ پہلا ماہ رمضان آیا ہے جس میں آٹے پر کوئی سبسڈی نہیں دی گئی ‘پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں سے متعلق حقائق عوام کے سامنے رکھیں گے۔ پچھلی حکومت کا بنایا ہوا ڈھانچہ ریت کی دیوار کی طرح گر رہا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اسپیکر قومی اسمبلی اور وزیراعظم آزاد جموں و کشمیر کے استعفوں کی سمری صدر مملکت کو بھجوا دی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں