61

امریکاآئی ایم ایف سے رقم دلوائے

امریکاآئی ایم ایف سے رقم دلوائے
اسلام آباد(اے پی پی)پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے پاکستان کی گرتی معیشت کو مستحکم کرنے میں مدد کے لئے انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ (آئی ایم ایف )سے قرض کی جلد فراہمی میں تعاون کے لئےواشنگٹن سے رابطہ کیا ہے۔غیر ملکی میڈیا کے مطابق آرمی چیف نے کہاکہ وائٹ ہاؤس آئی ایم ایف پر1.2بلین ڈالرکی قسط فوری جاری کرنے کیلئے دباؤڈالے۔ سکیورٹی ذرائع کے مطابق آرمی چیف نے رواں ہفتے کے آغاز میں امریکی نائب وزیر خارجہ وینڈی شرمین سے فون پر بات کی۔ذرائع کا کہنا تھا کہ آرمی چیف نے وائٹ ہاؤس اور محکمہ خزانہ سے اپیل کی کہ وہ آئی ایم ایف سےتقریباً 1.2 بلین ڈالر کی فوری فراہمی یقینی بنانے کے لئے اپنا کردار ادا کرے ۔ آئی ایم ایف نے 13جولائی کو قرض کی فراہمی کے لیے پاکستان کے ساتھ اسٹاف لیول کی منظوری دے دی تھی ۔ اس کثیرالجہتی قرض کی فراہمی ایگزیکٹو بورڈ کی جانب سے حتمی منظوری کے بعد عمل میں آنی تھی۔اگلے تین ہفتوں کی چھٹی کے باعث آئی ایم ایف بورڈ کا کوئی اجلاس نہیں ہونا ۔ آئی ایم ایف کے ایک عہدیدار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پربتایا کہ پاکستان کے لیے قرض کی منظوری کے اعلان کے لئے کوئی ٹھوس تاریخ طے نہیں کی گئی۔اسلام آباد کے لیے وقت کی اہمیت ہے کیونکہ روپیہ ڈالر کے مقابلے میں گر رہا ہے، اور ملک کے پاس غیر ملکی ذخائر 9 بلین ڈالر سے بھی کم رہ گئے ہیں، جو دو ماہ کے درآمدی بلوں کے تحت ہیں۔ آئی ایم ایف اہلکار کے مطابق اسٹاف لیول منظوری اور بورڈ کی منظوری میں بڑا فرق ہے۔ہمارے اسٹیک ہولڈرزممالک جو ووٹ لیتے ہیں کہ آیا وہ اس کی حمایت کر رہے ہیں یا نہیں، حتمی فیصلہ کرتے ہیں۔ یہ ایک فرق ہے، لہذا قانونی طور پر بورڈ کی منظوری کے پابند ہیں، اسٹاف لیول معاہدہ کے نہیں۔1945 میں قائم ہونے والے اس فنڈ میں امریکہ سب سے بڑا شیئر ہولڈر ہے۔اہلکار نے بتایا کہ متعدد سینئر پاکستانی حکام نے گزشتہ ہفتے آئی ایم ایف اور ورلڈ بینک میں امریکہ اور دیگر اہم اسٹیک ہولڈر ممالک سے ملاقات کی ہے تاکہ آئی ایم ایف کے ایگزیکٹو بورڈ کے فیصلوں کے وقت کے بارے میں خدشات کی نشاندہی کی جاسکے اور پاکستان کی طرف سے کئے جانے والے اقدامات پر پاکستان کی پیشرفت کا جائزہ لینے کے لیے بات چیت کی جائے۔ذرائع کے مطابق ان ملاقاتوں میں پیش رفت نہ ہونے کی وجہ سے آرمی چیف واشنگٹن کی توجہ مبذول کروانے پر مجبور ہوئے۔1958 سے پاکستان نے آئی ایم ایف کے 22 الگ الگ پروگرام شروع کیے لیکن صرف ایک مکمل کیا۔ایکسچینج سے واقف حکام نے اعتراف کیا کہ کرنسی اور غیر ملکی ذخائر کی صورتحال تشویشناک ہے۔ذرائع نے کہا کہ اگر حکومت اس مشکل مہینے سے گزر سکتی ہے تو معیشت کو مستحکم کرنے کے اچھے مواقع ہیں لیکن اگست آسان نہیں ہوگا۔دریں اثنا، اسٹیٹ بینک کے قائم مقام گورنر مرتضیٰ سید نے میڈیا سے بات چیت میں کہا کہ پاکستان کے ڈیفالٹ کا خدشہ غالب ہے۔ انہوں نے کہا کہ آئندہ 12 ماہ کے لیے فنانسنگ کی ضروریات پوری کی جائیں گی۔ انہوں نے زور دیاکہ پاکستان کو آئی ایم ایف بعد کی بجائے جلد فنڈنگ ملنی چاہئےلیکن یہ بھی تفصیل سے بتایا کہ اضافی مالی اعانت حاصل کرنے کے لیے اسلام آباد سعودی عرب اور چین کے ساتھ بات چیت کر رہا ہے۔ ان دو ممالک کا آرمی چیف نے حال ہی میں دورہ کیا تھا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں