مفتی منیب الرحمٰن 0

کیا ہم جاہل نسل تیار کرنے جا رہے ہیں؟

60 / 100

کیا ہم جاہل نسل تیار کرنے جا رہے ہیں؟
مفتی منیب الرحمٰن
کوروناوائرس ایک عالمی وبا ہے ، تاحال اس سے بچائو کے لیے کوئی مؤثر ویکسین مارکیٹ میں نہیں آئی، اگرچہ برطانیہ ، امریکہ، روس اور چین نے ویکسین تیار ہونے کے دعوے کررکھے ہیں اور مختلف ممالک کی تیار کردہ ویکسین کے نتیجہ خیز ہونے کی شرح ستّر تا نوّے فیصد بتائی جارہی ہے۔ کورونا وائرس تاریخ انسانی کی ایک ایسی وبا ہے جس سے پسماندہ ممالک کے مقابلے میں جدید سائنسی اور فنی علوم میں دنیا کے صفِ اول کے ترقی یافتہ ممالک زیادہ متاثر ہوئے ہیں۔ ہم چونکہ روایتی اعتبار سے طویل عرصے تک انگریزوں کی نوآبادیات رہے ہیں ، اس لیے کسی تجزیے یا تحقیق کے بغیر آنکھیں بند کر کے تقلید کرناہمارا شعار بن گیا ہے اور ہمیں باور کرایا گیا کہ ’’لاک ڈائون ‘‘اس وبا کا مقابلہ کرنے کا واحد حل ہے۔ بہت سے یورپی ممالک بالخصوص برطانیہ میں لاک ڈائون کے خلاف احتجاج ہورہے ہیں، لیکن اس لاک ڈائون کے باوجود برطانیہ اور بعض مغربی ممالک میں تعلیمی ادارے کھلے ہیں، انہوں نے تعلیم پر تالابندی نافذ نہیں کی ، حالانکہ برطانیہ کی آبادی تقریباً چھ کروڑ ہے اور وہاں آج کل کورونا وائرس کی وجہ سے یومیہ اموات کی تعداد ہم سے دس گنا زیادہ ہے، اس کے برعکس الحمد للہ! پاکستان کی آبادی بائیس کروڑ سے متجاوز ہے اور حکومت کے اپنے بیان کے مطابق یومیہ اموات کی تعداد ساٹھ کے دائرے میں ہے۔ ہمارے ہاں کورونا وائرس کے بارے میں اعداد وشمار جاری کرنے اور اس کے سدِّباب کی تدابیر اختیار کرنے کے بارے میں ’’نیشنل کمانڈ اینڈآپریشن سنٹر‘‘ قائم کیا گیا ہے۔ ہم اس بحث میں نہیں پڑتے کہ ان اعداد وشمار کی حقیقت کیا ہے ، برطانیہ میں بی بی سی ٹیلی ویژن پر ٹکر چل رہا تھا:’’اس بات کا کوئی سائنٹیفک ثبوت نہیں ہے کہ لاک ڈائون سے کورونا وائرس کنٹرول ہوجاتا ہے ‘‘، الغرض کورونا وائرس کی وبا کے حوالے سے نظریاتی اختلافِ رائے مغرب کے اہلِ علم کے درمیان بھی موجود ہے۔
این سی او سی کے نزدیک آسان حل یہ ہے کہ تعلیمی ادارے بند کردیے جائیں، پھر اس سے بھی زیادہ آسان ترحل یہ نکالا گیا کہ پڑھائے اور امتحان لیے بغیر اگلے درجے میں ترقی دے دی جائے ، اب آپ غور فرمائیں کہ اس سے علم کو فروغ حاصل ہوگا یاجہالت کو۔ایک اور اہم سوال یہ ہے کہ اسکولوں کی بندش کی صورت میں کیا بچے گھروں میں محصور ہوکر رہ جائیں گے یا گلی کوچوں میں کھیل کود کریں گے اور میل جول ہوگا، جبکہ ماسک پہن کر بچے کلاس میں بیٹھ سکتے ہیں اور تعلیم کا سلسلہ جاری رکھا جاسکتا ہے۔ کبھی کہاجاتا ہے :’’آن لائن کلاسیں جاری رکھی جائیں ‘‘،اور تو چھوڑیے!کیا ملک بھر میں پھیلے ہوئے سرکاری تعلیمی اداروں میں ایسی سہولت موجود ہے ، کیا ملک کے نادار طبقات کے پاس ہر جگہ انٹرنیٹ کی سہولت موجود ہے یا حکومت نے اُس کی فراہمی کی ضمانت دی ہے۔ جن انگلش میڈیم اداروں میں آن لائن کلاسوں کے دعوے کیے جارہے ہیں، وہ بھی محض علامتی اور برائے نام ہیں، یہ ہمارا ذاتی تجربہ ہے ،اندھیرے میں تیر چلانے والی بات نہیں ہے، اگر بالفرض کہیں یہ سہولت موجود بھی ہو تو استاذ کے ساتھ براہِ راست تعامل اوررابطے کے بغیر انتقالِ علم اعلیٰ معیار پر کسی صورت میں نہیں ہوسکتا، ورنہ ترقی یافتہ ممالک میں تعلیمی اداروں کا نظام ختم کرکے آن لائن تعلیم وتعلّم کا سلسلہ شروع ہوچکا ہوتا۔سنّتِ الٰہیہ بھی یہی ہے کہ اللہ تعالیٰ نے انسانوں کی ہدایت کے لیے کتب بھی نازل فرمائیں اور رجالِ کتب یعنی انبیائے کرام علیہم السلام بھی مبعوث فرمائے تاکہ احکامِ الٰہی کو اپنی ذات پر نافذ کرکے قوم کے سامنے نمونۂ عمل پیش کریں۔
ایک انسانی مسئلہ بھی جنم لے رہا ہے ، جو مڈل کلاس یا اپر مڈل کلاس یا اپر کلاس کے تعلیمی ادارے ہیں، درجنوں قسم کے اشرافیہ طبقات کے اسکولوں میں جہاں بھاری فیسیںہیں ، وہ پابندی سے فیس وصول کر رہے ہیں اور لوگ ادا کر رہے ہیں ۔ لیکن شہروں کے نسبتاً پسماندہ علاقوں کے گلی کوچوں میں اور دوردراز قصبات کے پرائیویٹ اسکولوں میں جہاں ماہانہ فیسیں پانچ سو سے ہزار کے درمیان یا کم وبیش ہیں ، انہیں فیسیں وصول نہیں ہورہیں ، اُن اسکولوں میں ضرورت مند طبقات کی لڑکیاں اور لڑکے تدریس کے فرائض انجام دیتے ہیں اور انہیں پانچ سات ہزار کے درمیان تنخواہیں ملتی ہیں، وہ سب بے روزگار ہوچکے ہیں، کیا حکومت نے اُن کی اعانت کا کوئی انتظام کر رکھا ہے۔ سرکاری تعلیمی اداروں کے اساتذہ کو تو باقاعدہ تنخواہیں مل رہی ہیں ، اس لیے تعلیمی اداروں کی بندش سے وہ راحت محسوس کریں گے ۔
ماضی میں حکومتوں کو دینی مدارس وجامعات سے کوئی سروکار نہیں ہوتا تھا، لیکن اب حکومت چاہتی ہے کہ اُس کے غیر منطقی اور غیر معقول فیصلوں کا اطلاق دینی مدارس پر بھی ہو، جبکہ دینی مدارس کا نظامِ تعلیم بالکل جدا ہے، یہاں ایک درجہ یا کسی فن کی ابتدائی یا وُسطانی کتب پڑھے بغیراگلے درجے میں ترقی عملاً ناممکن ہے۔ نہایت آسان اور قابلِ فہم بات سمجھ لیجیے : مثلاًایک بچہ دس پارے کا حافظ ہے اور اُس کا حفظِ قرآنِ کریم کا سلسلہ جاری وساری ہے ، اچانک اُسے کہہ دیا جائے کہ آپ تین مہینے کے لیے گھر بیٹھ جائیں ، جب آپ واپس آئیں گے تو آپ پندرہ پاروں کے حافظ ہوجائیں گے ، آپ کو اس کے مطابق سند اور ترقی مل جائے گی ، کیا ایسا ممکن ہے، حفظِ قرآنِ کریم میں علامتی درجاتی ترقی نہیں ہوتی ،بلکہ بندہ یاتو حافظِ قرآن ہے یا نہیں ہے، درمیانی چیز کوئی بھی نہیں ہے، یہی صورتِ حال دینی علوم کے درجات اور ہر فن کی ترتیب وار کتب کی ہے کہ نچلے درجے کی کتاب پڑھے بغیر اوپر والے درجے کی کتاب کا سمجھناطلبہ کے لیے عملاً ناممکن ہے، نیز یہ بات بھی قرینِ انصاف نہیں ہے کہ پڑھائی اور امتحان کے بغیر اگلے درجے میں ترقی دیدی جائے اورقابل وناقابل کے درمیان کوئی درجاتی فرق باقی نہ رہے ۔ یہ امربھی پیشِ نظر رہے کہ دینی مدارس کی سالانہ تعطیلات کا تعلق موسم سے نہیں ہوتا ،یہ ہمیشہ شعبان تا پندرہ شوال طے شدہ ہیں ، اس لیے ان میں تقدیم وتاخیر نہیں ہوسکتی۔
امریکہ میں نیویارک اسٹیٹ کے گورنرانڈریوکومو نے سخت لاک ڈائون کا اعلان کرتے ہوئے عبادت گاہیں بھی بند کرنے کے احکام جاری کردیے ، یہودی مذہبی طبقات نے اس پر نیو یارک کی عدالت میں اپیل کی تو فیصلہ حکومت کے حق میں آیا ،پھر انہوں نے امریکہ کی سپریم کورٹ میں اپیل کی تو سپریم کورٹ کے جج صاحبان نے پانچ اور چار کی نسبت سے یہودی مذہبی طبقات کے حق میں فیصلہ دے دیا کہ امریکہ کی پہلی آئینی ترمیم کی رُو سے کسی کے بنیادی حقوق اور مذہبی حقوق کو سلب نہیں کیا جاسکتا ،’’امریکی دستور کی پہلی ترمیم کانگریس کو پابند کرتی ہے کہ کسی خاص مذہب کو مستحکم کرنے یا اُس کے مذہبی معمولات کو روکنے کی بابت قانون نہیں بنایا جائے گا، یہ ترمیم آزادی اظہار، پریس کی آزادی ،اجتماع کی آزادی یا حکومت کے خلاف اُس کے کسی فیصلے یا حکمنامے کے خلاف پٹیشن کے حق کا تحفظ کرتی ہے‘‘۔
ہمارے ہاں حکومتوں کے اقدامات اوربیانات تضادات کا مظہر ہوتے ہیں، ایک طرف وزراء بیان دیتے ہیں کہ ڈیڑھ سو جلسے بھی حکومت کا کچھ نہیں بگاڑ سکتے، دوسری طرف ایک جلسے کو روکنے یا ناکام بنانے کے لیے تمام ریاستی وسائل جھونک دیے جاتے ہیں، ہماری نظر میں اس کا فائدہ حکومت سے زیادہ اپوزیشن کو پہنچتا ہے، فارسی ضرب المثل کا مفہومی ترجمہ ہے: ’’ ایسی عقل و دانش پر گریہ ہی کیا جاسکتا ہے‘‘۔
ان تمام تر گزارشات کا مقصد یہ ہے کہ عصری تعلیم کے میدان میں پاکستان پہلے ہی اقوامِ عالَم سے پیچھے ہے ، پاکستان میں شرحِ خواندگی ناقابلِ رشک بلکہ باعثِ شرمندگی ہے ۔ الیکٹرانک اور پرنٹ میڈیا میں شیشے کے گھروں میں بیٹھنے والے ہمارے لبرل حضرات نے مساجد کی بندش کے لیے ایڑی چوٹی کا زور لگایا ، مگر اللہ تعالیٰ نے فضل فرمایا اور مذہبی طبقات کی کاوشیں کارگر ثابت ہوئیں ، صدرِ پاکستان جناب ڈاکٹر عارف علوی اور وزیرِ اعظم جناب عمران خان نے بھی حکمت وتدبراور وسعتِ نظر سے کام لیا اور مسئلہ اَحسن طریقے سے حل ہوگیا۔ پاکستان میں ایک دن کے لیے بھی مساجد بند نہیں ہوئیں اور یہ حرمین طیبین سمیت ساری دنیا میں پاکستان کا ایک امتیاز رہا ۔ مساجد میں ارضی وسماوی آفات وبلیّات ، بلائوں اور وبائوں سے نجات کے لیے روزانہ پانچ وقت دعائیں مانگی جاتی رہیں، مساجد میں قرآنِ کریم اور احادیثِ نبی کریم ﷺ اوردینی علوم کے تعلیم وتعلّم کا سلسلہ ایک دن کے لیے بھی موقوف نہ ہوااور اس کی برکت سے اللہ تعالیٰ نے پاکستان کو کافی حد تک اس عالمی وبا کے اثرات سے محفوظ رکھا ، ورنہ خدانخواستہ اگر مغربی ممالک کی طرح یہاں وبا کا پھیلائو ہوجاتاتو ہمارے نظامِ صحت کا پورا ڈھانچہ زمیں بوس ہوجاتا ، ہماری رائے میں ہمارے کسی کمال نے نہیں ، بلکہ اللہ تعالیٰ کے فضل نے پاکستان کو بڑی حد تک محفوظ رکھا۔ وزیر اعظم پاکستان نے ایک سے زائد مرتبہ اس بات کا اعتراف کیا کہ مساجد سے کورونانہیں پھیلا ، نیز جن احتیاطی تدابیر کے ساتھ پاکستان کی مساجد کھلی رہیں، بعد میں انہی کے مطابق حرمین طیبین کھولے گئے۔
تعلیم وتعلُّم کے لیے ایک آفت یہ بھی ہے کہ اگرطویل عرصے کے لیے تعلیم کا سلسلہ موقوف ہوجائے ، تو پہلے کا پڑھا ہوا بھی بچوں کے ذہن سے نکل جاتا ہے اورطویل وقفے کے بعد تعلیم کا سلسلہ دوبارہ جاری رکھنے کی صورت میں پچھلا پڑھا ہوا ذہن میں تازہ کرنے کے لیے از سرِ نواُسے دُہرانا پڑتا ہے ، کیونکہ عمارت کا پہلا ردّا جب تک جم نہ جائے ،اُس پر دوسرا رَدّا نہیں رکھاجاسکتا، ورنہ عمارت میں نقص رہ جاتا ہے، جو بعد میں پوری عمارت کے لیے خطرے کا باعث بنتا ہے، اس لیے این سی او سی سے ہماری استدعا ہے کہ تعلیمی اداروں کی بندش پر از سرِ نو غورکرکے اس بندش کو اٹھایا جائے، کیونکہ حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ صنعتی اداروں کو بند نہیں کیا جائے گا، تو کیا بڑے صنعتی اداروں میں انسانوں کا میل جول نہیں ہوتا، ہماری مسلّح افواج اور سلامتی کے ادارے ہر وقت ہائی الرٹ اور مصروفِ عمل نہیں ہوتے، نیز کیاحکومت کا نظام فرشتے یا جنّات چلا رہے ہیں یا ہمارے ہاں نئی نسل کی تعلیم ترجیحات میں شامل ہی نہیں ہے، اگر ایسا ہے تو یہ ایک بہت بڑا المیہ ہے۔حکومت کا کام یہ ہے کہ تعلیمی اداروں میں ماسک اور سینیٹائزر فراہم کرے، ماحول کو حفظانِ صحت کے اصولوں کے مطابق بنائے، بیت الخلا سمیت صفائی کا اہتمام ہو، پینے کے لیے صاف پانی فراہم کیا جائے اور یہ محض وبا کے زمانے تک محدود نہ ہو، بلکہ ان امور کا مستقل اہتمام ہونا چاہیے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں