53

ملکی تاریخ میں پہلی مرتبہ امریکا کو پاکستانی برآمدات کا حجم 5 ارب ڈالر سے زائد ہو گیا

55 / 100

حکومت کی مثبت معاشی پالیسی سے امریکا کو پاکستانی برآمدات میں 39 فیصد کا ریکارڈ اضافہ ، ملکی تاریخ میں پہلی مرتبہ امریکا کو پاکستانی برآمدات کا حجم 5 ارب ڈالر سے زائد ہو گیا- تفصیلات کے مطابق مالی سال 2021 میں امریکہ کو پاکستانی برآمدات میں 39فیصد اضافہ ہوا- سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنی ٹویٹ میں مشیرتجارت عبدالرزاق داؤد کا کہنا تھا کہ مجھے یہ بتاتے خوشی محسوس ہو رہی ہے کہ مالی سال 2021 میں امریکہ کو پاکستانی برآمدات میں 39 فیصد اضافہ ہوا ہے، اس کامیابی پر برآمدکنندگان اور امریکہ میں تعینات ٹرینڈ اینڈ انوسٹمنٹ آفیسر کی کاوشیں قابل تحسین ہیں۔
مشیر تجارت نے بتایا کہ مالی سال 2020 میں امریکا کو 3.7ارب ڈالر کی برآمدت رہی تھیں، جب کہ مالی سال 2021 میں امریکا کو پاکستانی برآمدات مجموعی طور پر 5.2 ارب ڈالر کی رہیں،اور یہ تاریخ میں پہلی بار ہو رہا ہے کہ امریکا کو پاکستانی برآمدات کاحجم 5 ارب ڈالر سے زائد رہا ہے۔
واضح رہے کہ گزشتہ دنوں وزارت خزانہ نے ملکی معیشت پر ماہانہ اپ ڈیٹ آﺅٹ لک رپورٹ جاری کی تھی جس میں کہا گیا تھا کہ معاشی بحالی اور سرگرمیوں میں تیزی کا سلسلہ برقرار ہے۔

وزارت خزانہ کی رپورٹ کے مطابق صنعتی اور زرعی پیداوار میں بہتری جبکہ ٹیکس ریونیو اور ترسیلات زر میں اضافہ ہوا ہے، جولائی تااپریل ترسیلات زر29فیصد اضافے سے 26.7 ارب ڈالر ریکارڈ کیا گیا۔ ملکی برآمدات10.3فیصد اضافے سے 23.1ارب ڈالر تک پہنچ گئیں جبکہ درآمدات17.9فیصد اضافے سے 47.3ارب ڈالر ریکارڈ کی گئی۔ رپورٹ کے مطابق کرنٹ اکاﺅنٹ بیلنس ایک بار پھر20کروڑ ڈالر سرپلس ریکارڈ کیا گیا، کرنٹ اکاﺅنٹ بیلنس جی ڈی پی کا 0.1فیصد ریکارڈ ہوا، پورٹ فولیوسرمایہ کاری مثبت رجحان کے ساتھ1.75ارب ڈالرتک پہنچیں، براہ راست غیرملکی سرمایہ کاری 107فیصد اضافے سے 3.92ارب ڈالر جبکہ مجموعی زرمبادلہ ذخائر مئی کے اختتام تک22ارب96کروڑڈالر تک پہنچ گئے۔
رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اسٹیٹ بینک15.79ارب ڈالر اور کمرشل بینکوں کے ذخائر7.17ارب ڈالر رہے ڈالر کی شرح تبادلہ158.53روپے فی ڈالر کی سطح پرپہنچ گئی، پہلے10ماہ میں ٹیکس ریونیو17.5فیصد اضافے سے 4170ارب روپے رہا، پہلے10ماہ میں نان ٹیکس آمدنی6.5 فیصد کمی سے1216ارب رہی۔وزارت خزانہ نے بتایا کہ پہلے10ماہ میں پی ایس ڈی پی مد میں 565ارب روپے منظور کیے گئے، مالیاتی خسارہ کم ہو کر 2020ارب روپے کی سطح تک پہنچا، زرعی قرضے 10.3فیصد اضافے سے 1191ارب روپے پر پہنچ گئے، مہنگائی کی سالانہ شرح مئی میں 10.9فیصد رہی جبکہ جولائی تا مئی میں 8.8فیصد رہی۔
ماہانہ اپ ڈیٹ آﺅٹ لک رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ بڑی صنعتوں کی شرح نمو اپریل میں 68.1فیصد تک پہنچ گئی، شرح نمو جولائی تا اپریل میں 12.8فیصد تک پہنچی، اسٹاک ایکسچینج انڈیکس 47 ہزار901 پوائنٹس عبور کر گیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں