50

عمران خان نے یکساں تعلیمی نصاب کا اجرا کر دیا

وزیراعظم عمران خان نے پاکستان بھر میں تعلیم کے شعبے میں طبقاتی تقسیم کو ختم کرنے کے لیے یکساں نصابِ تعلیم کا اجرا کر دیا۔ اس حوالے سے اسلام آباد میں منعقدہ ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ وزیر تعلیم شفقت محمود اور ان کی ٹیم کو خراج تحسین پیش کرنا چاہتا ہوں۔ ان کا کہنا تھا کہ 25 سال سے یہ نظریہ تھا کہ پاکستان میں ایک دن ایک ہی نصاب پورے ملک میں پڑھایا جائے، لوگ کہتے تھے کہ یہ ناممکن ہے، کیونکہ جنہوں نے اس کے فیصلے کرنے تھے، ان کے بچے انگریزی میڈیم اسکول میں پڑھتے تھے اور انہی کے لیے ساری نوکریاں تھی۔ انہوں نے کہا کہ سول سروس میں جانے کے لیے بھی انگریزی میڈیم پڑھنا ضروری تھا۔ عمران خان کا کہنا تھا کہ برطانوی حکومت انگریزی میڈیم اس لیے لائی تھی کہ وہ ہندوستان میں اپنا کلچر نافذ کرنا چاہتے تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ ہم نے آزاد ہونے کے بعد انگریزی میڈیم کے نصاب کو ایک کرنے کے بجائے اسے جاری رکھا، جس کی وجہ سے یہ تفرقہ بڑھتا گیا۔

انہوں نے کہا کہ جب میں نے لاہور کی ٹیم سے کرکٹ کھیلنا شروع کی تو ہمارے درمیان اتنا فرق تھا کہ ٹیم کے لوگوں سے دوستی بھی نہیں ہوسکتی تھی۔ انہوں نے بتایا کہ میری سوچ تھی کہ ہمیں موقع ملے تو ایک نصاب لائیں، تاکہ ہماری قوم کی سوچ ایک ہو، ایلیٹ طبقہ اگر کسی نظام سے فائدہ اٹھا رہا ہو تو وہ اسے تبدیل ہونے نہیں دیتا۔ وزیراعظم کا کہنا تھا کہ یہ پہلا قدم ہے، اس میں مزید مشکلات کا سامنا کرنا ہوگا، لوگ کہیں گے کہ ہمارا تعلیمی نظام تباہ ہو رہا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ جب بھی کوئی بڑا قدم اٹھایا جاتا ہے تو کشتیاں جلانی پڑتی ہیں، ہم تمام مشکلات کے باوجود اس ملک کو ایک قوم بنائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے ملک کو ایک اور بہت بڑا نقصان یہ ہوا کہ ہم صرف انگریزی زبان نہیں سیکھتے بلکہ ان کا کلچر ہی اپنا رہے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ اگر ہم کسی کے کلچر کو اپناتے ہیں تو ذہنی طور پر غلام ہو جاتے ہیں، جسے ختم کرنا بہت مشکل ہوتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایک غلام ذہن بڑے کام نہیں کرسکتا، آپ کسی کی کاپی کرکے اچھے غلام بن سکتے ہیں، مگر ان سے آگے نہیں جاسکتے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ غلامی کی زنجیریں توڑنی بہت ضروری ہیں اور ایک نصاب سے ہمیں آزادی کی راہ ملے گی۔ ان کا کہنا تھا کہ 8 ویں، 9ویں اور 10 ویں جماعت میں سیرت نبوی پڑھائی جائے گی، اسے 2023ء کا ٹائم لائن دیا گیا ہے۔ شفقت محمود سے درخواست کرتا ہوں کہ اسے 5 یا 6 ماہ میں نافذ کریں، اتنی دیر کی ضرورت نہیں۔ انہوں نے کہا کہ دنیا کی تاریخ میں کسی کی اتنی کامیابی نہیں، جو ہمارے نبیﷺ کی ہے، اللہ ہمیں ہماری ہی بہتری کے لیے حکم دیتا ہے کہ حضرت محمدﷺ کی زندگی سے سیکھو۔ انہوں نے کہا کہ ہماری کوشش یہ ہوسکتی ہے کہ ہم اپنے بچوں کو راستہ دکھائیں، اس لیے چاہتا ہوں کہ یہ جلد از جلد ہو۔ وزیراعظم کا کہنا تھا کہ علامہ اقبال صدیوں کے سب سے بڑے اسلامی اسکالر تھے، انہیں دین کی سمجھ تھی، پھر انہوں نے مغربی فلسفہ پڑھا تو وہ بہتر تجزیہ کرسکے تھے اور ان کا تجزیہ آج بھی متعلقہ ہے جبکہ اب ہم یا تو مغرب کی طرف دیکھتے ہیں یا دوسری طرف مغرب کو جانتے ہی نہیں ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ تعلیم سے لوگوں نے ایٹم بم بنایا، جس سے لاکھوں کی جانیں جاتی ہیں اور کسی نے کروڑوں کی جانیں بچائیں، تعلیم کافی نہیں، اس کے ساتھ انسانیت بھی ضروری ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ پاکستان کی اقلیتوں کو بھی ان کے مذہب کے بارے میں پڑھایا جائے، کیونکہ تمام مذاہب انسانیت کا درس دیتے ہیں۔ قبل ازیں وزیرِاعظم عمران خان نے پاکستان بھر میں تعلیم کے شعبے میں طبقاتی تقسیم کو ختم کرنے کے لیے یکساں نصابِ تعلیم کا اجرا کیا۔ وزیراعظم آفس کے میڈیا ونگ سے جاری بیان کے مطابق معاشرتی اقدار، تقافتی و مذہبی تنوع کا احترام، عملی زندگی کے پہلو اور پیشہ وارانہ تعلیم و ہنر بھی نصاب کے اہم پہلو ہیں۔ یکساں تعلیمی نصاب اکیسویں صدی سے ہم آہنگ نصاب طالبِ علموں میں مثبت تنقیدی سوچ اور تخلیقی صلاحیتوں کو نکھارنے میں معاون ثابت ہوگا۔ بیان میں کہا گیا کہ حکومت کے ہر شہری کو ترقی کے یکساں مواقع فراہم کرنے کے ویژن کے عین مطابق، یکساں نصابِ تعلیم طبقاتی فرق کو ختم کرنے میں ایک اہم سنگِ میل ثابت ہوگا۔ وزیرِاعظم تقریب میں مہمانِ خصوصی کے طور پر شریک ہوئے تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں