’اسلام سے پہلے کسی مذہب کی جانب رجحان نہیں تھا‘، جینیفر گراؤٹ 345

’اسلام سے پہلے کسی مذہب کی جانب رجحان نہیں تھا‘، جینیفر گراؤٹ

سات سال قبل اسلام قبول کرنے والی امریکی گلوکارہ جینیفر گراؤٹ کا کہنا ہے کہ اسلام سے پہلے کسی مذہب کی جانب اُن کا رجحان نہیں تھا۔

برطانوی نشریاتی ادارے کو دیئے گئے ایک انٹرویو میں جینیفر گراؤٹ نے مذہب کی تبدیلی سے متعلق بات کرتے ہوئے کہا کہ’ مجھے ایسا لگتا ہے کہ میں نے اسلام کو نہیں بلکہ اسلام نے مجھے چنا ہے۔‘

اسلام قبول کرنے والی امریکی گلوکارہ کی تلاوت قرآن پاک کی ویڈیو مقبول

2013 میں مراکش میں اسلام قبول کرنے والی جینیفر گراؤٹ کا مزید کہنا تھا کہ ہم یک ایسے معاشرے میں رہتے ہیں جو ظاہری حالت پر زور دیتا ہے۔ اس لیے بطور ایک انسان، بطور ایک مسلمان ہمارا کام ہے کہ باطن کی افزائش پر کام کریں۔

انہوں نے مزید کہا کہ صرف خدا کو ہی معلوم ہے کہ ہم حقیقت میں کیسے ہیں اس لیے میں کسی اور کا ظاہری حال دیکھ کر یہ فیصلہ نہیں کر سکتی کہ وہ کیسا ہے۔

جینیفر گراؤٹ کون ہیں؟

’اسلام سے پہلے کسی مذہب کی جانب رجحان نہیں تھا‘
عرب دنیا کے سب سے بڑے میوزیکل شو ’عرب گاٹ ٹیلنٹ‘ میں شرکت کرکے صاف عربی زبان میں گانا گا کر سب کو حیران کرنے والی جینیفر گراؤٹ نے موسیقی کی تعلیم امریکا سے حاصل کی ۔

امریکی جریدوں کے مطابق جینیفر گراؤٹ امریکا میں پیدا ہوئیں اور وہیں پرورش پائی، وہ خالصتاً امریکی خاندان میں پیدا ہوئیں جس کا عرب ثقافت سے دور دور تک کوئی تعلق نہیں تھا۔

نوجوانی میں جینیفر گراؤٹ کو عرب ثقافت میں دلچسپی پیدا ہوئی جس کے لیے وہ مراکش چلی آئیں۔ یہاں انہوں نےعرب میوزک کی ابتدائی معلومات حاصل کر کے ٹیلنٹ شو میں حصہ لینے کا فیصلہ کیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں